Hear Fellowship With My Family Episode 23 (Audio MP3)

View FWMF episode 23 as a PDF file

سبق نمبر23 صفحہ نمبر1

گواہی دینا

﴿گیت:تم یسوع کے الیچی ہو +دروازے پر گھٹنی﴾

ندیم: ﴿پکار کر﴾ بھئی آرہا ہوں۔

﴿Music out +دروازہ کھلتا ہے﴾

ندیم: ہیلوپروین،کیا بات ﴿دروازہ بند ہو تا ہے﴾آج دیر سے گھر پہنچی ہو۔

پروین: جی ندیم،کام کچھ زیادہ تھا۔آپ جلدی آگئے تھے؟

ندیم: تقر یباًآدھ گھنٹہ ہوا ہے۔چائے وائے پی ہے۔اب اخبار پڑھ رہا تھا۔

پروین: کوئی خاص خبر؟

ندیم: نہیں،وہی پرانی خبریں ہیں۔البتہ ایک خبر نے میری توجہ اپنی طرف ضرور کھنچی ہے۔

پروین: وہ کیا؟

ندیم: یہ اُن لوگوںکے بارے میں ہے جو شیطان کو پوجتے ہیں ۔ یہاں لکھا ہے کہ اُن کی تعداد کروڑوں تک پہنچ گئی ہے۔

پروین: اوہ میرے خدا،یہ کیوں شیطان کی پوجا کرتے ہیں۔یہ کیوں عیسیٰ مسیح کی پوجا نہیں کرتے ۔جنہوں نے اِن سے محبت کی بلکہ اپنی جان تک اِن کیلئے قربان کردی۔

ندیم: پروین، یہ اُن کی غلطی نہیں۔ یہ ہماری غلطی ہے ۔

پروین: ہماری غلطی ؟وہ کیسے؟

ندیم: پر وین ہم تو جانتے ہیں کہ عیسیٰ مسیح نے ہمارے لئے کیا کچھ کیا۔مگر وہ نہیں جانتے۔اُن میں سے تو بہتوں نے عیسیٰ مسیح کے متعلق کبھی سنا بھی نہیں۔اور یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم اُنہیں عیسیٰ مسیح کے بارے میں بتائیں۔آج ہم اِسی موضوع پر بات چیت کریں گے۔

پروین: ٹھیک ہے۔

﴿دروازے کی گھنٹی بجتی ہے﴾

ندیم: پروین،دیکھو کون آیا ہے۔میرے کمرے کا دروازہ پلیز بند کر تی جانا۔تھوڑی تیاری کر لوں۔﴿پھر دروازہ پر گھنٹی بجتی ہے﴾

پروین: بھئی آ رہی ہوں۔ ﴿دروازہ کھلتا ہے﴾ ۔ ہیلو عادل، ہیلو شمیم ۔ آپ کیسے ہیں۔

شمیم اور عادل: باجی ہم ٹھیک ہیں۔آپ کا کیا حال ہے۔

سبق نمبر23 صفحہ نمبر2

پروین: شکریہ ،میں بھی ٹھیک ہوں۔کچھ کھانے کیلئے لائوں؟

عادل: نہیں،شکریہ، ہم کھانا کھا کر آئے ہیں ۔

﴿دروازے کی گھنٹی﴾

پروین: یہ ضرور زیدی صاحب اورنائیلہ ہو نگے۔میں دیکھتی ہوں﴿دروازہ کھُلتا ہے﴾ ۔ ہیلو آپ کیسے ہیں۔

نائیلہ: پروین بہن،ہم ٹھیک ہیں ۔

زیدی: ندیم بھائی اور ناصر نظر نہیں آرہے۔

پروین: زیدی بھائی،ندیم آج کے مضمون کی تیاری کر رہے ہیں ۔ناصر کو میں بلاتی ہوں۔

ناصر: بلانے کی ضرورت نہیں میں خود ہی آگیا ہوں۔

زیدی: ناصر کیا حال ہے۔پڑھائی کیسی جارہی ہے۔

ناصر: انکل زیدی،خدا کا شکر ہے۔سب ٹھیک ہے۔

شمیم: ہر بار جب ہم مِلتے ہیں۔مجھے ایسا محسوس ہوتا ہے۔ہم کوئی تہوار منا رہے ہیں۔

نائیلہ: جی ہاں ،مجھے بھی ایسا ہی لگتا ہے ۔

پروین: ندیم بھی آگئے ہیں۔اور چائے بھی حاضر ہے۔

تمام: آپ کا شکریہ۔شکریہ۔مہربانی۔

ندیم: ہیلو،آپ سب کا کیا حال ہے۔

تمام: ہم ٹھیک ہیں۔خداکا شکرہے۔خداوند کی تمجید ہو۔

شمیم: ندیم بھائی،باجی پروین بتا رہی تھیں کہ آپ آج کے موضوع کی تیاری کر رہے تھے۔

ندیم: جی شمیم،ہمارا آج کا موضوع عیسیٰ مسیح کی گواہی دینے کے متعلق ہے۔

عادل: اور میںابھی شمیم سے بات کر رہا تھا کہ ہمیں اِس موضوع کے متعلق سیکھنے کی ضرورت ہے۔

زیدی: ہاں بیشک۔ ہم سب کو اِس کے بارے میںجاننے کی ضرورت ہے۔ ہر روز ہزاروں لوگ عیسیٰ مسیح کو جانے بغیر موت کا لقمہ بن جاتے ہیں۔

نائیلہ: جی ہاں،عیسیٰ مسیح کے بارے میں دوسروں کو بتانا بہت ضروری ہے ۔جب زیدی نے مُجھے عیسیٰ مسیح کے بارے میں بتانا شروع کیا،تو آہستہ آہستہ مجھے معلوم ہو تا گیا کہ عیسیٰ مسیح خداوند ہیں۔

سبق نمبر23 صفحہ نمبر3

ندیم: آمین۔ مُجھے یقین ہے کہ ہمارا خدا آج ہم سے کلام کرے گا۔نائیلہ، پلیز آپ عبادت میں ہماری راہنمائی کریں۔

نائیلہ: ٹھیک ہے ندیم بھائی۔آئیں ہم سب مل کر وہ گیت گائیں ۔میں اپنے پورے دل سے خداوند کی شکر گز اری کروں گا۔

﴿گیت:میں اپنے پورے دل سے۔۔۔۔۔﴾

نائیلہ: آمین۔

تمام: آمین۔

ندیم: اِس سے پہلے کہ ہم گواہی دینے کے بارے میں گفتگو کریں ۔ دیکھتے ہیں کہ عیسیٰ مسیح نے اپنے شاگردوں سے آسما ن پرجانے سے پہلے کیا کہا، ناصر ! مہربانی کر کے ایک آیت پڑھو۔حوالہ ہےِ حضرت مرقس کی معرفت انجیل سولہواں باب اور پندرھویں آیت۔

ناصر: اچھا۔ ابو ۔﴿حوالہ تلاش کرتے ہوئے﴾" اور اُس نے اُن سے کہا کہ تم تمام دنیا میں جا کر ساری خلق کے سامنے انجیل کی منادی کرو۔ْْ‘‘

ندیم: حضرت متی کی معرفت انجیل، باب 28،آیت19اور20بھی پڑھتے ہیں۔پروین آپ یہ آیات پڑھ دیجئے۔

پروین: ﴿صحیح صفحات کی طرف پلٹتے ہوئے﴾ پس تم جا کر سب قوموں کو شاگرد بنائو اور اُن کو باپ اور بیٹے اور روح القدس کے نام سے بپتسمہ دو۔اور اُن کو یہ تعلیم دو کہ اُن سب باتوںپر عمل کریں جِن کا میںنے تم کو حُکم دیا اور دیکھو میں دنیا کے آخر تک ہمیشہ تمہارے ساتھ ہوں۔

ندیم: کیا آپ نے دیکھا کہ یہ آیات بالکل ایک دوسرے سے مِلتی ہیں ۔

عادل: جی دونوں حوالہ جات گواہی کے بارے میں بتاتے ہیں۔

ندیم: عادل آپ درست کہتے ہیں ۔ دونوںحوالہ جات میں ایک ہی چیز کو دہرایا گیا ہے ۔ خُداوند ہم کو قوموں کے پاس جانے کا حُکم دے رہے ہیں ۔اُنہوں نے کِسی خاص گروپ کے پاس جانے کو نہیں کہا ۔ اُنہوں نے ہمیں سب لوگوں کے پاس جانے کو کہا اور اُنہیں خوشخبری کی منادی کرنے کو کہا۔ لفظ " منادی" کے معانی ہیں کوئی خاص سچائی بتانا۔ لیکن روحانی معنی ہیں ، تاریکی کی بادشاہت کو فتح کرنا ۔جو شیطان کے چنگل میں ہیں۔ انہیں خُدا کی بادشاہی میں واپس لانا۔اِ س کا مطلب ہے کہ کلیسیائ نے صرف خُداوند کی عبادت ہی نہیں کرنا بلکہ اُسے باہر جانا ہے۔عیسیٰ مسیح کے متعلق لوگوں کو بتانا ہے اور اُنہیں عیسیٰ مسیح کی بادشاہت میں شامل کرناہے۔وہ سب جو خُدا کی عبادت نہیں کرتے وہ شیطان کی بادشاہت میں ہیں ۔ ہمیں فوری جانا ہے اور انہیں خُدا کی بادشاہت میں لانا ہے جو راحت اور آرام کی بادشاہت ہے۔

نائیلہ: میں عیسیٰ مسیح کے نام میں ایک سادہ سی مثال کے ساتھ منادی کی تشریح کر نا چاہتی ہوں ۔ ایک بیمارشخص کو شفایاب ہونے کے لئے سبق نمبر23 صفحہ نمبر4

دواکی ضرورت ہوتی ہے۔ ہر وہ شخص جو مسیح سے دور ہے وہ بیمار ہے اُسے شفائ کی ضرورت ہے ۔ علاج انجیل کی خوشخبری ہے۔ خوشخبری اُسے بیماری سے بچا سکتی ہے ۔ اگر میں انجیل کی منادی نہیں کرتی تو میں علاج کو چھپائے رکھتی ہوں۔

ندیم: نائیلہ، یہ بہت اچھی مثال ہے ۔ ہمار ے ا رد گرد کتنے لوگ ہیں جنہیں خو شخبری کی ضرورت ہے ۔ عیسیٰ مسیح کے بارے جاننے کی ضرورت ہے ۔ لیکن ہم اُنہیں نہیں بتاتے۔

عادل: اوہ، میں تو ہمیشہ یہ خیال کرتا تھا کہ ہمارے لئے صرف عبادت کرنا ہی اہم ہے۔میں نہیں جانتا تھا کہ گواہی دینا بھی اِس قدر اہم ہے۔میرا خیال تھا کہ خدا نے چند لوگوں کو اِس خدمت کے لئے چنا ہے۔لیکن اب پتہ چلا ہے کہ ہم سب کو اس خدمت میں حصہ دار ہو نا چاہئے۔یہ خدا کی مرضی ہے۔

ندیم: خداوند عیسیٰ مسیح حضرت یوحنا کی معرفت انجیل،اُس کے پندرھویں باب کی سولہویں آیت میں یوں فرماتے ہیں۔تم نے مُجھے نہیں چُنا بلکہ میں نے تمہیں چُنا کہ جائو اور پھل لائو ۔ وہ پھل جو سدا قائم رہے گا۔

ناصر: ابو۔انجیل شریف تو فرماتی ہے۔ ہم خُدا کی کاریگری ہیں جو مسیح یسوع میں نیک کام کرنے کے لئے خلق کئے گئے ہیں۔اِس کا ٍ مطلب ہے کہ خدا نے ہماری پیدائش سے پہلے ہی ہمارے لئے ایک منصوبہ تیار کر لیا تھا۔

شمیم: خُدا کی تعریف ہو ۔ میں ہمیشہ ہر ایک کو جو میرے پاس عیسیٰ مسیح کے متعلق پوچھنے کے لئے آتا ہے ۔عیسیٰ مسیح کے بارے میں بتاتی ہوں۔

پروین: شمیم یہ کافی نہیں ہے ۔ جو دو آیتیں ہم نے اپنی میٹنگ کے شروع میں پڑھی تھیں وہ ایک لفظ جائو سے شروع ہوتی ہیں۔ اِس کا مطلب ہے کہ خُداوند یہ نہیں چاہتا کہ ہم لوگوں کا انتظار کریں ۔بلکہ وہ چاہتا ہے کہ ہم اُن کے پاس جائیں۔ گواہی دینے میں سب سے اہم چیز جانا ہے۔ ہمیں جانے کی ضرورت ہے اورعیسیٰ مسیح کے متعلق بات کرنے کی ضرورت ہے۔

ندیم: بالکل۔ گواہی دینے میں سب سے اہم چیز لوگوں کے پاس جانا ہے اور سب سے اہم لوگوں کو خُدا کی بادشاہی میں واپس لانا ہے۔

زیدی: ندیم صاحب جو آپ نے کہا ہے۔ اُس بات کی یاد دِلاتا ہے جو عیسیٰ مسیح نے اپنے بارے میں کہی تھی۔اُنہوں نے ایک تمیثل بتائی اور کہا، ایک چرواہا تھا جِس کے پاس سو بھیڑیں تھیں ۔ اُن میں سے ایک کھو گئی پس اُس نے ننانوے کو چھوڑا اور ایک گمشدہ بھیڑ کی تلاش میں چلا گیا ۔جب وہ بھیڑ مِل گئی ۔ اُس نے اُسے پکڑا اور گلے لگایا کیو نکہ وہ اُسے پا کر خوش تھا ۔ چرواہے کو توقع نہ تھی کہ گمشدہ بھیڑواپس آئے گی۔اِس لئے وہ خود اُسے ڈھونڈنے چلا گیا ۔

شمیم: خداوند عیسیٰ مسیح نے سامری عورت سے گفتگو کرنے کیلئے یہودیہ سے سامریہ تک بہت لمبا سفر کیا۔وہ اپنی انجیروں سے آزاد ہو گئی۔خوشی اور اطمینان سے بھر گئی۔

سبق نمبر23 صفحہ نمبر5

ندیم: جوکچھ ہم نے اب تک کہا ہے ظاہر کرتا ہے ہمیں جانے اور لوگوں کو بتانے کی ضرورت ہے۔ ہمیں لوگوں کے آنے کا انتظار نہیں کرناچاہیے، ہمیں اُنہیں ڈھونڈنا چاہیے ۔

عادل: لیکن بعض اوقات مُجھے پتہ نہیں ہوتا کہ کیا کہوں۔ مُجھے سیکھنے کی ضرورت ہے۔

ندیم: لوگوںکو خُدا کی بادشاہت کے بارے میں بتانا مشکل کام نہیں۔ یاد رکھیں، ہمیں اپنے اچھے او رقائل کرنے والے الفاظ پر انحصار کرنے کی ضرورت نہیں۔عیسیٰ مسیح کے رسول حضرت پولوس نے کہا ،میرا پیغام اور میری منادی حکمت اور ترغیب دِلانے والے الفاظ سے نہیں تھی۔ بلکہ روح کی قدرت کے اظہار کے ساتھ جب ہم لوگوں کے پاس جاتے ہیں تو ہمیں یقین ہو نا چاہئے کہ خُداوند اُنہیں قائل کریگا۔

عادل: تو ہم لوگوں کو کیا بتائیں۔

ندیم: ہم لوگوںکو خُدا کی بادشاہی کی طرف لے جا رہے ہیں ۔ ہمارا مقابلہ بیماری ،گناہ ،غلامی اور مشکل حالات کے ساتھ ہے۔ضرورت اِس بات کی ہے کہ ہم ضرورت مند لوگوں کو تلاش کریں اور اُنہیں عیسیٰ مسیح کے متعلق بتائیں جو اُن کی ضرورت پوری کر سکتے ہیں۔

شمیم: آپ کا مطلب ہے کہ اگر کوئی بیمار ہے ہم شفائ کے لئے دُعا کر سکتے ہیں اور اگر کوئی گناہ کی زنجیروں میں جکڑا ہے۔ہم اُسے یقین دلا سکتے ہیں کہ عیسیٰ مسیح اُسے رہائی دے سکتے ہیں۔

ندیم: میں آپ کو یقین دِلا سکتا ہوں کہ بیمار لوگ شفائ پائیں گے ، تھکے آرام پائیں گے اور جو زنجیروں میں ہیں وہ آزاد کئے جائیں گے۔ کیونکہ عیسیٰ مسیح نے ہمیں ایسا کرنے کا اخیتار دے کر بھیجا ہے۔عیسیٰ مسیح نے کہا۔"میں نے تمہیں اختیار دیا کہ سانپوں اور بچھوئوں کو کچلو اور دشمن کی ساری قوت پر غالب آئو"۔

پروین: ایک اور آیت میں لکھا ہے، "اور ایمان لانے والوں کے درمیان یہ معجزے ہوں گے ۔ میرے نام سے وہ بیماروں پر ہاتھ رکھیںگے اور وہ شفائ پائیں گے۔

زیدی: بالکل ایسا ہی رسولوں کے ساتھ ہوا۔ جب عیسیٰ مسیح نے اُنہیں دو دو کر کے بھیجا ۔ کیا آپ کو یاد ہے کہ اُنہوں نے جب واپس آئے تو کیا کہا۔

نائیلہ: زیدی مجھے یاد نہیں۔

زیدی: اُنہو ں نے خوشی سے کہا، "بدروحیں بھی تیرے نام سے ہمارے تابع ہیں"۔

ندیم: جی ہاں،ہم یہ دیکھتے ہیں کہ جب لوگ نئی پیدا ئش حاصل کر تے اور شفا پاتے ہیں ۔تو عیسیٰ مسیح کے پیرو کاروں کو کس قدر خوشی ملتی ہے۔

سبق نمبر23 صفحہ نمبر6

زیدی: میں محسوس کرتا ہوں کہ ہم خُداوندعیسیٰ مسیح کی قوت کے بغیر کُچھ نہیں کر سکتے ۔

پروین: جی ہاں! ہمیں ہمیشہ عیسیٰ مسیح کی قوت کے طالب رہنا چاہئے۔

زیدی: یہ پہلی بار ہے کہ میرا دِل دوسروں کوعیسیٰ مسیح کے بارے میں بتانے کے لئے چاہ رہا ہے۔

ناصر: میںاکثر خُدا کی بادشاہت کے بارے لوگوں کو گواہی دینے کا موقع کھودیتا ہوں۔

نائیلہ: ندیم بھائی !کیا آپ سمجھتے ہیںکہ لوگوں کو عیسیٰ مسیح کے بارے میں بتانے کے لئے یہ صحیح وقت ہے۔کیا ہمیں تھوڑا انتظار نہیںکرنا چاہیے جب تک روحانی طور ربالغ نہ ہوجائیں۔

ندیم: آپ کی اس بات سے مجھے ایک بات یاد آئی ہے۔ایک شخص ٹریفک کی بتی پر رُک گیا ۔ جب روشنی سبزہو گئی وہ نہ ہلا۔ٹر یفک والا آیا اور اُس سے کہاکہ اپنی کار چلائے کیونکہ سبز بتی جل گئی ہے ۔ بالکل یہی ہمارے ساتھ ہو تا ہے ۔ خُداوند عیسیٰ مسیح نے کہا ،"فصل تیار ہے "۔ اِس کا مطلب ہے کہ دنیا خُدا کے کلام کے لئے بھوکی ہے ۔ اور یہی صحیح وقت ہے ۔ ٹریفک کی بتی سبز ہے ہمیں اور زیادہ انتظار نہیں کرناچاہیے۔ میری روحانی حالت کیسی بھی کیوں نہ ہو۔ خُد ا مُجھے استعمال کر سکتا ہے ۔ اِس سے بھی کُچھ فرق نہیں پڑتا میں ایمان میں کتنا مضبوط ہوں۔

پروین: میں وہ کہنا چاہتی ہوں جو عیسیٰ مسیح کے رسول حضرت پولوس نے کہا،"جب میں کمزور ہوتا ہوں تب میں زورآور ہوتا ہوں"۔اور انہوں نے یہ بھی کہا،"میری طاقت میری کمزوری میں مکمل ہوتی ہے"۔

عادل: مُجھے بھی ایک آیت یاد آگئی ہے جو کہتی ہے ،"کمزور کہے میں خُداوند میں مضبوط ہوں"۔

ندیم: مختصر یہ کہ خُدا چاہتا ہے ساری دنیا اُس کے پاس آئے ۔ وہ چاہتا ہے کہ ساری دنیا عیسیٰ مسیح کو اپنے اوپر بادشاہ کے طور پر قبول کرلے۔ اپنے خاندانوں ، اپنی زندگیوں اور اپنے ملکوں پر بھی۔ وہ انہیں اُن کے دکھ سے خلاصی دینا چاہتا ہے۔آج ہم سب کو دعوت دی جاتی ہے کہ باہر جائیںاور اپنے اردگرد کے لوگوں کو انجیل کی بشارت دیں۔ ہماری روحانی حالت خواہ کیسی بھی کیوں نہ ہو۔ خُدا اپنی بادشاہی میں کمزور لوگوں کو استعمال کر سکتا ہے ۔ اوروہ اُنہیں استعمال کر سکتا ہے۔ دنیا دو تین لوگوں سے تبدیل نہیں ہو گی، خُدا کی ساری کلیسیائ کو حرکت میں آناچا ہیے۔ تمام ایمانداروں کو شیطان کی بادشاہت سے آزاد کرنے میں ہم سب کو شر یک ہو نا چاہئے۔آئیں ہم دعا کریں کہ ہم اپنے دوستوں،رشتہ داروں اور اپنے ساتھ کام کرنے والوں کو گواہی دینے کیلئے تیار ہوں۔اور عیسیٰ مسیح سے وعدہ کریں کہ اگلے ہفتے ہم اُنہیں عیسیٰ مسیح کے بارے میں گواہی دیں گے کہ وہ انہیں پیار کرتے ہیں۔

ناصر: اے خُداوند میں اکبر کے لئے دُعا کرتا ہوں جو یونیورسٹی میں میرا دوست ہے۔ میں دُعا کرتا ہوں کہ وہ تجھے جانے اور تجھے اپنا منجی سبق نمبر23 صفحہ نمبر7

قبول کرے۔

زیدی: خُداوند میں سہیل کے لئے دُعا کرتا ہوں جو ہمارا پڑوسی ہے۔ میری مدد کر کہ اگلے ہفتے میں اُسے تیرے متعلق بتائوں۔ خُداوند اُس کے دِل کو تیار کر کہ تجھے قبول کرے۔

پروین: میں نگہت اور سیلم کے لئے جو میرے ساتھ کام کرتے ہیں دُعا کرتی ہوں۔ خُداوند میری مدد کر کہ اگلے ہفتے اُن سے بات کروں۔

ندیم: خُداوند میں وعدہ کرتا ہوں کہ تیرے متعلق اپنے دوست عو بید سے بھی بات کروں گا۔ خُداوند ایسا کر کہ وہ تجھے اپنی زندگی کا بادشاہ قبول کریں۔ عیسیٰ مسیح کے نام میں ۔ آمین۔

تمام: آمین۔

ندیم: کیا کوئی۔ کوئی بات کر نا چاہتا ہے۔

ناصر: میرا خیال ہے میرا دوست اکبر میری بات نہیں سُنے گا ۔ بہت مشکل ہے کہ وہ عیسیٰ مسیح پر ایمان لائے ۔ میں نہیںجانتا میں کیا کروں۔ کیا میں کِسی اور سے عیسیٰ مسیح کے متعلق بات کروں؟

ندیم: ناصربعض اوقات ہم کِسی چیز سے ڈرجاتے ہیں اورا ُس سے پہلو تہی کرناشروع کر دیتے ہیں ۔ تم بھی اکبر سے بات کرنے سے ڈررہے ہو کیونکہ تمہارا خیال ہے کہ وہ تمہاری بات نہیں سُنے گا۔ لیکن اگر تم اُس سے بات کرنے کی کوشش کروتو تمہیں پتہ چلے گاکہ اُس کا دِل تمہارے لئے کھلا ہے ۔ ڈرنے کی کوئی ضرورت نہیں۔

زیدی: کیا آپ کو یاد ہے میں نے بھی کہا تھا کہ نائیلہ سے میرے لئے بات کرنا نا ممکن ہے۔

نائیلہ: اچھا،تو آپ اِن سے میرے بارے میں اِس قسم کی باتیں کر تے رہے ہو۔

تمام: ہنستے ہوئے۔

نائیلہ: زیدی ِ آپ نے سچ کہا،اگر آپ میرے لئے دُعا نہ کرتے ۔ آج میں آپ کے ساتھ یہاں نہ ہوتی۔بہرحال میرے جیسے ہزاروں لوگ ہیں جنہیں عیسیٰ مسیح کے بارے جاننے کی ضرورت ہے ۔

شمیم: میں بھی چاہتی ہوں آپ میرے لئے دُعا کریں کہ خُداوند مُجھے الفاظ د ے جب میں امانت کے ساتھ بات کروں کہ وہ عیسیٰ مسیح پر ایمان لائے۔

ندیم: آمین۔

تمام: آمین۔

پروین: خُداوند قادرمطلق ۔ ہم تجھے جلال دیتے ہیں کیونکہ تُو نے ہمیں دنیا میں اپنا کلام لے جانے کا حکم دیاہے ۔ میں شمیم کے لئے دُعا

سبق نمبر23 صفحہ نمبر8

کرتی ہوں کہ جب وہ امانت سے بات کرے اختیار سے بولے ۔اِس کے الفاظ امانت کے دِل کو چھوئیں۔ عیسیٰ مسیح کے نام

میں ۔آمین۔

تمام: آمین۔

ندیم: اگلے ہفتے میں ہم دو کام کریں گے ۔پہلا یہ کہ ہم خُداوند سے دُعا کریں گے اور روزہ رکھیں گے کہ وہ اپنی بادشاہت کو بڑھائے اور دوستوں سے بات کرنے کے لئے دروازے کھولے ۔ جب ہم یہاں آئیں گے ہم اکٹھے روزہ کھولیں گے اور کھاناکھائیں گے۔ دوسرا یہ کہ ہم حضرت دائود کی زندگی کا مطالعہ کریں گے۔ تیاری کرکے آئیے گا۔خداوند آپ کے ساتھ ہو۔

تمام: آمین۔